ساحر لدھیانوی کی شاعری میں پیکر تراشی: عرشیہ جبین



 ساحر لدھیانوی اردو وشعرو ادب میں اپنی ترقی پسند فکر کی وجہ سے شہرت رکھتے ہیں۔وہ ایک معروف گیت کار بھی رہے ہیں۔انھوں نے ہندی فلموں کو بے شمار یادگار گیت دیے ہیں۔ان کی شاعری میں اس عہد کے سیاسی و سماجی حالات کی بہترین عکاسی ملتی ہے۔وہ اپنی شاعری میں مزدوروں اور کسانوں کے جہاں غم خوار نظر آتے ہیں۔ وہ رومانی جذبات واحساسات کے شاعر بھی دکھائی دیتے ہیں۔ اپنی شاعری میں اپنے تجربات و مشاہدات اورقلبی واردات کا بیان انھوں نے اپنے انوکھے انداز اور خوبصورت تشبیہات، استعارات اور صنعتوں کے استعمال سے کرکے حسین پیکر تراشے ہیں۔ یہی سبب ہے کہ ان کی شاعر ی میں ان کی ساحرکی زندگی کے حقیقی تجربات اور اس عہد کے سیاسی و سماجی مسائل کی جیتی جاگتی تصویریں نظر آتی ہیں۔

ساحر کی شاعری میں شعری پیکر کی تلاش سے پہلے یہ جاننے کی کوشش کرتے ہیں کہ پیکر کسے کہتے ہیں۔ڈاکٹر شہپر رسول پیکر کی تعریف پیش کرتے ہوئے لکھتے ہیں:

’’پیکر ایک ایسی لسانی اور ذہنی تصویر ہے جس کے ذریعے شاعر اپنے نازک،نادر اور نایاب شعری تجربات کا اظہار کرتاہے اور ان کو نکھار نے، سنوارنے، نیز روشن کرنے کاکام کرتا ہے۔پیکر ایک ایسا الہامی نزول ہے جس کا زیادہ تر حصہ لاشعوری ہوتا ہے اور اس کا ورود اس لمحے یا اس کیفیت میں ہوتا ہے جب جذبات بام عروج پر ہوتے ہیں۔یعنی شاعر کے پیدا و پنہاں جمالیاتی تخلیقی اور تجربوں کا عطر پیکرکہلاتا ہے۔‘‘

(ڈاکٹر شہپر رسول،اردو غزل میں پیکر تراشی آزادی  کے بعد،دہلی، 1999،ص30)

اس تعریف سے یہ پتہ چلتا ہے کہ پیکر دراصل شاعر کے جذبات اور تجربات کا نچوڑ ہوتے ہیں۔پیکر دو طرح کے ہوتے ہیں ایک مرئی پیکر اور دوسرے غیرمرئی پیکر۔مرئی پیکر سے مراد وہ پیکر جو نظر آتے ہیں مثلاً چراغ، بادل،آسماں،،افق،تلوار،شجر،زنجیر،چاند،سورج وغیرہ اورغیر مرئی پیکر سے مراد ایسے پیکر جو دکھائی نہیں دیتے۔ مثلاًعشق،عقل، روح، جنوں اور آرزو وغیرہ۔ ساحر کے یہاں مرئی اور غیر مرئی دونوں پیکر ملتے ہیں۔ دونوں کے ذریعے ساحر اپنے ذاتی جذبات و احسا سات اور اپنے عہد کے حالات و تجربات کی ایسی تصویر کشی کرتے ہیں کہ ہم ان پیکروں کے ذریعے اس مخصوص ماحول میں خود کو محسوس کرنے لگتے ہیں۔ مثلاً ساحر کے ہاں فضا، افق، چاند، بادل، پربت، زنجیر جیسے مرئی پیکر کی  مثالیں ملتی ہیں جس کے خوبصورت استعمال سے شاعر نے اس عہد کے سیاسی قوانین،ظلم و ستم اور قتل و غارت گری کی بڑی عمدہ تصویر کشی کی ہے وہیں دوسری طرف مرئی پیکر کے ذریعے ساحر کے رومانی جذبات و احساسات کی حسین تصویریں بھی ہمارے سامنے رقص کرتی محسوس ہوتی ہیں چند مثالیں ملاحظہ کیجیے          ؎

فضا میں گرم بگولوں کا رقص جاری ہے

افق پہ خون کی مینا چھلک رہی ہے ابھی

——

چاند مدّھم ہے،آسماں چُپ ہے

نیند کی گود میں جہاں چپ ہے

——

افق کے دریچے سے کرنوں نے جھانکا

فضا تن گئی راستے مسکرائے

——

دور وادی میں دودھیا بادل

جھک کے پربت کو پیار کرتے ہیں

——

دل میں ناکام حسرتیں لے کر

ہم تیرا انتظار کرتے ہیں

غیر مرئی پیکرہمارے ذہن کے پردے پر بنتے ہیں جنھیں ہم دیکھنے سے قاصر رہتے ہیں۔مثلاً خدا، جنت، جہنم، قیامت، میدانِ حشر اور روح وغیرہ۔ساحر کے یہاں غیر مرئی پیکر کی مثالیں دیکھیے         ؎

فضائیں سوچ رہی ہیں کہ ابن آدم نے

خدا گنوا کے جنوں آزماکے کیا پایا

——

سرد شاخوں میں ہوا چیخ رہی ہے ایسے

روح تقدیس و وفا مرثیہ خواں ہو جیسے

انسانی جذبات و محسوسات کی تصویریں بھی ہمارے ذہن میں پیکر تخلیق کرتی ہیں۔ جس کا نہ تو مشاہدہ کیا جاسکتاہے اور نہ ہی اُسے چھوا جاسکتا ہے مگر ضرورت پڑنے پر اسے محسوس کیا جاسکتاہے۔مثلاً، آرزو، امید، غم، خوشی،مستی،ہوا،نشہ وغیرہ۔ساحر کے یہاں ایسے پیکر بھی ملتے ہیں۔جن سے انھوں نے اپنے جذبات و احساسات کی حسین دنیا آباد کی ہے مثلاً یہ مثالیں دیکھیے       ؎

اے آرزو کے دُھندلے خوابو جواب دو

پھر کس کی یاد آئی تھی مجھ کو پکارنے

——

سینے کے ویراں گوشوں میں اِک ٹیس سی کروٹ لیتی ہے

ناکام امنگیں روتی ہیں، امید سہارے دیتی ہے

ان مرئی و غیر مرئی پیکر کے علاوہ ساحر کے یہاںایسے پیکربھی تخلیق ہوئے ہیں جو ہمارے احساس اور ادراک کو متاثر کرتے ہیںاور ان کا تعلق ہمارے حوا س خمسہ سے ہوتا ہے۔ پروفیسر اسلوب احمد انصاری حسی اور ادراکی پیکر کی تعریف کرتے ہوئے لکھتے ہیں:

’’شعری پیکر کی سہل ترین تعریف یہ ہے کہ تجربے کے سیاق وسباق میں نقوش یا کیفیات کامصور بیان ہے۔یہ بھی کہا گیا ہے اور یہ کہنا بڑی حد تک درست بھی ہے کہ شعری پیکر جذبات اور احساسات کی باقیات کی تصویر کشی ہے یعنی جذبات، احساسات اور ارتعاشاتِ ذہنی و روحانی کو رنگ آواز،یا خوشبو کے پیکر سے مر بوط کیے بغیر انھیں اظہار کی گرفت میں لانا ممکن نہیں۔شعری پیکر کا استعمال محض کمال فن کی دلیل نہیں بلکہ حقیقت کے عرفان کا ایک بہت ہی لطیف اور موثر وسیلہ بھی ہے... شعری پیکر صرف مفرد الفاظ یا تراکیب کے درو بست سے ایک محرکانہ فضا ہی کو وجود میںنہیں لاتا بلکہ اس گنجینہ معنی کا طلسم بھی کھلتا ہے اور فنکار کی زندگی سے متعلق اپنے بنیادی رویے اور اپنے نظام اقدار کو بھی بسا اوقات پڑھنے  والے تک پہنچاتا ہے۔گویا شعری پیکر نظم یا غزل کے تاروپود میں ایک کلیدی حیثیت کا حامل ہے۔‘‘

(بحوالہ میر کی غزل میں پیکر تراشی از ڈاکٹر ابوالکلام عارف،ایجوکیشنل پبلشنگ ہاؤس،دہلی،2016،ص48)

اس تعریف کے مطابق جب ہم ساحر کی شاعری کا مطالعہ کرتے ہیں تو حقیقت عیاں ہوتی ہے کہ ساحر نے شاعری میں اپنی ذاتی زندگی کے تجربات و مشاہدات کی ایسی دلفریب تصویریں پیش کی ہیں کہ ان کے تجربات ان کے اپنے ہوتے ہوئے قاری ان احساسات سے دوچار ہونے لگتا ہے۔خصوصاً  انھوں نے اپنے حواس خمسہ کے ذریعے ذہن کے پردے پر بننے والی تصویر یا امیج کو خوبصورت الفاظ اور عمدہ شعری محاسن کے ذریعے شعر کے قالب میں ڈھال کردلکش شعری پیکر تخلیق کیے ہیں جن میں گنجینہ معنی کا طلسم کھل کر سامنے آتا ہے۔

ساحر کے یہاںحواس خمسہ سے متعلق تمام پیکر ملتے ہیں۔  مثلاً بصری،سمعی،شمومی،مذوقی اور لمسی۔ بصری پیکر سے مراد وہ پیکر ہیں جو کسی رنگ،شکل اور حرکت کے ذریعے ہماری بصارت کو متوجہ کرتے ہوں۔ساحر کے کلام میں یہ پیکر بڑی خوبی  سے ملتے ہیں۔انھوں نے اپنے داخلی جذبات و احساسات کے اظہارکے لیے اور کبھی خارجی تجربات و تصورات کے بیان کے لیے رنگ و نور اور اس کے تلازمات کا استعمال بڑی عمدگی سے کیا ہے اور ان رنگین پیکروں کے ذریعے اپنی امیدوں اور آرزوؤں کی بستی آباد کرنے کی کوشش کی ہے۔چند مثالیں دیکھیے        ؎

اب رنگین رخساروں میں تھوڑی زردیاں بھر دے

حجاب آلود نظروں میں ذرا بے باکیاں بھر دے

——

پھول چپکے سے چرالیں گے لبوں کی سرخی

یہ جواں حسن فضائوں میں رہے گا صدیوں

——

صبح کے نور پہ تعزیر لگانے کے لیے

شب کی سنگین سیاہی نے وفا مانگی ہے

——

کہاں کا مہرِ منور کہاں کی تنویریں

کہ بام و در پہ سیاہی جھلک رہی ہے ابھی

——

جانے کب نکھرے سیہ پوش فضا کا جوبن

جانے کب جاگے ستم خوردہ بشر کی تقدیر

بصری پیکر کسی شکل سے متعلق بھی ہوتے ہیں۔ ساحر لدھیانوی نے اپنے کلام میں ایسے بہت سے پیکر تخلیق کیے ہیں۔جیسے اوس، شبنم، غبار، پھول،  زمیں، موج، شاخ وغیرجن کی کوئی شکل ہے۔اور ان متشکل پیکروں کے ذریعے قدرت کے حسن کی بڑی خوبصورت تصویر کشی کرنے کی کوشش کی ہے۔وہ اس طرح ہیں          ؎

جہاں جہاں تری نظروں کی اوس ٹپکی تھی                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                           وہاں  وہاں سے ابھی بھی غبار اٹھتا ہے

جہاں جہاں ترے جلوؤں کے پھول بکھرے تھے

وہاں وہاں دلِ وحشی پکار اٹھتا ہے

——

کہو کہ اب کوئی قاتل اگر اِدھر آیا

تو ہر قدم پہ زمیں تنگ ہوتی جائے گی

ہر ایک موجِ ہوا رُخ بدل کے جھپٹے گی

ہر ایک شاخ رگِ سنگ ہوتی جائے گی

مذکورہ اشعار میں نظروں کی اوس، جلوئوں کے پھول، دل ِ وحشی، موج ہوا، رگ ِ سنگ وغیرہ تراکیب کے ذریعے ایک نئی تصویر ابھر تی ہے جو ساحر کے مخصوص طرز فکر اور طرز احساس کا پتہ دیتی ہے۔

بصری پیکر میںلفظوں کے متحرک پیکر بھی آتے ہیں۔ ساحرلدھیانوی کی شاعری میں ان کے جذبات و احساسات کی بڑی متحرک تصویریں ملتی ہیں جو ساحر کے داخلی و خارجی جذبات و احساسات کی ترجمانی کرتی ہیں۔چند مثالیں دیکھیے        ؎

ہم کو تقدیر سے بے وجہ شکایت کیوں ہو

اسی تقدیر نے چاہت کی خوشی بھی دی تھی

——

آج  اگر کانپتی پلکوں کو دیے ہیں آنسو

کل تھرکتے ہونٹوں کو ہنسی بھی دی تھی

——

اِدھر بھی خاک اڑی اُدھر بھی زخم پڑے

جدھر سے ہوکے بہاروں کے کارواں نکلے

——

اس طرف سے گزرے تھے قافلے بہاروں کے

آج تک سلگتے ہیں زخم رہ گزاروں کے

ناز صدیقی نے ساحر کے یہاں بصری پیکروںسے متعلق رائے کا اظہار کرتے ہوئے بتایا ہے کہ ساحر کے زیادہ تر پیکر حسی بصارت کو متوجہ کرتے ہیں۔جو اُ س عہد کے سماجی اور طبقاتی تضاد کے اظہار کے لیے استعاروں کی صورت میں استعمال ہوئے ہیں۔مثلاً وہ لکھتی ہیں

’’ایک سرسری انداز ے کے مطابق ساحر کے کلام میں زیادہ تر پیکر حسی بصارت کو متوجہ کرتے ہیں ان کے کلام میں رنگوں اور شکلوں کے پیکر بہت کم ہیں۔اکثر شعرا نے سماج اور طبقاتی تضاد اور مخالف اخلاقی قدروں کے اظہار کے لیے زیادہ تر انھیں استعاروں سے کام لیا ہے۔ بصری پیکروں کے بعدلمسی اورسماعی پیکر ملتے ہیں۔‘‘

(بحوالہ ساحر لدھیانوی ایک مطالعہ،مخمور سعیدی، موڈرن پبلشنگ ہائوس، نئی دہلی،1981،ص110)

ساحر کے کلام میں شمومی پیکر بھی ملتے ہیںلیکن اس کی تعداد زیادہ نہیں ہے۔ انھوں نے اپنے شمومی پیکروں میں خاص طور پر محبوب کے حسین جلووں اور محبوب کے بدن کی خوشبو کا ذکر کرکے اپنی شاعری میں جمالیاتی اور رومانی فضا تخلیق کرنے کی کوشش کی ہے۔ چند مثالیں دیکھیے        ؎

گھس کے رہ جائے گی جھونکوں میں بدن کی خوشبو

زلف کا عکس گھٹائوں میں رہے گا صدیوں

——

قطرہ قطرہ ترے دیدار کی شبنم ٹپکی

لمحہ لمحہ تری خوشبو سے معطر گزرا

ساحر کے کلام میں ہمیں لمسی پیکر کی مثالیں بھی ملتی ہیں۔ لمسی پیکر کبھی کسی چیز کی نرمی وسختی کوظاہر کرتے ہیں کبھی کسی شئے کی گرمی یا سردی کا احساس دلاتے ہیں۔ساحر نے تشبیہ،استعارہ اور صنائع کے استعمال سے لمسی پیکر تخلیق کیے ہیں جو ان کے عشقیہ جذبات،محبوب سے دوری، تنہائی اور ملنے کی آرزو کا پتہ دیتے ہیں۔مثلاً         ؎

تپتے دل پر یوں گرتی ہے

تیری نظر سے پیار کی شبنم

جلتے ہوئے جنگل پر جیسے

برکھا برسے رک رک تھم تھم

——

رات کی سرد خموشی میں ہر اک جھونکے سے

تیرے انفاس ترے جسم کی آنچ آتی ہے

——

ڈھونڈتی رہتی ہیں تخیل کی بانھیں تجھ کو

سرد راتوں کی سلگتی ہوئی تنہائی میں

ساحر کی شاعری میں سمعی پیکربھی ملتے ہیں۔ ساحر نے اس عہد کے سیاسی و سماجی حالات سے پیدا شدہ صورتحال کی تصویرکشی اپنے سمعی پیکر میں بڑی عمدگی سے کی ہے ۔عالمی جنگ کے تناظر میں جو ڈر و خوف اور وحشت ناک مناظر سامنے آرہے تھے،جن سے ہر دل کانپ جاتا تھا۔ایسے دردناک مناظر کی تصویر کشی انھوں نے اپنے سمعی پیکروں کے ذریعے بڑی خوبصورتی سے کی ہے۔ چند مثالیں دیکھیے جن سے اس عہد کے خوفناک مناظر کی تصویریں ہماری نظروں میں گھوم جاتی ہیں      ؎

ناگاہ لہکتے کھیتوں سے ٹاپوں کی صدائیں آنے لگیں

بارود کی بوجھل بو لے کر پچھم سے ہوائیں آنے لگیں

تعمیر کے روشن چہرے پر تخریب کا بادل پھیل گیا

ہر گائوں میں وحشت ناچ اٹھی ہر شہر میں جنگل پھیل گیا

——

دیواروں کا جنگل جس کا آبادی ہے نام

باہر سے چپ چپ لگتا ہے اندر ہے کہرام

دیواروں کے اس جنگل میں بھٹک رہے انسان

اپنے اپنے الجھے دامن جھٹک رہے انسان

——

رواں ہے چھوٹی سی کشتی ہوائوں کے رخ پر

ندی کے ساز پہ ملاح گیت گاتا ہے

’پرچھائیاں‘ ساحر لدھیانوی کی مشہور نظم ہے۔ جس میں شاعر کے جذبات و احساسات کی تصویریںشاعرانہ لطافتوں کے ساتھ پیش کی گئی ہیں۔ سردار جعفری نے اس نظم کے حوالے سے ساحر کے کلام میں نقاشی اور رنگ بھرنے کی اس خوبی کی ستائش طرح کی ہے جس سے محاکاتی کیفیت پیدا ہوتی ہے۔ وہ لکھتے ہیں

’’اس محاکاتی کیفیت کو پیدا کرنے کے لیے ساحر نے لفظوں کے استعمال میں بھی بڑی خوش مذاقی دکھائی ہے۔اس نے بعض مقامات پر نقاشی اور رنگ کا کام کیا ہے۔الفاظ جو چند حروف کی اجتماعی شکلیں ہیں...  اور خطوط میں تبدیل ہوجاتے ہیںاور کاغذ کے صفحہ پر ایک منظر کھینچ دیتے ہیں۔ان کی صوتی کیفیت میں ٹکرائو اور جھنکار کی بجائے ایک خاموش اور بے آواز روانی ہے۔ جیسے صاف اور چکنی سطح پر آہستہ آہستہ پانی بہہ رہا ہو۔‘‘

(دیباچہ پر چھائیاںبحوالہ کلیات ساحر لدھیانوی، فرید بک ڈپو،نئی دہلی،ص166)

ساحر کے کلام میں مذوقی پیکر کی مثالیں بھی ملتی ہیں لیکن یہ پیکربہت کم ہیں۔شاعر کے عہد کے مایوس کن  سماجی  حالات کی وجہ سے ان کی ذاتی زندگی میں جو تلخی اور غم آگیا ہے،اس کو دور کرنے کے لیے شاعر اپنے محبوب کو تسلی دیتا نظر آتا ہے اور ان تلخیوں اور وحشت ناکیوں سے فرار حاصل کرنے کے لیے محبوب سے قربت حاصل کرنے کی خواہش بھی رکھتا ہے۔ شاعر کی دلی کیفیات و احساسات کی یہ سچی تصویریں ان کے مذوقی پیکر میںبڑی خوبی سے ڈھل گئی ہیں۔ملاحظہ کریں          ؎

لب پہ شکوہ نہ لا، اشک پی لے

جس طرح بھی ہو کچھ دیر جی لے

اب اکھڑنے کو ہے غم کا ڈیرہ

کس کے روکے رکا ہے سویرا

——

جہاں جہاں ترے جلوؤں کے پھول بکھرے تھے

وہاں وہاں دل وحشی پکار اٹھتاہے 

——

پکارتیں مجھے جب تلخیاں زمانے کی!

ترے لبوں سے حلاوت کے گھونٹ پی لیتا

یادداشتی پیکربھی ساحر کے کلام میں ایک نئے اور انوکھے انداز میں آئے ہیں۔ساحر کے یہاں ماضی کی خوشگوار یادیں حال کی پریشانیوں کے ساتھ مل کر تکلیف دہ صورت اختیار کر لیتی ہیں۔ وہ محبوب کی یاد آوری کے عمل سے گزر کر اس ماضی کو حال سے اس طرح مربوط کر دیتے ہیں کہ وہ ماضی کے دردناک لمحات کے کرب میں حل ہوکر اور بھی تکلیف دہ ہو جاتا ہے۔ہجر، درد، رنج دلی،روحانی اذیت اور تنہائی کاکرب،ان یادداشتی پیکروں میں ڈھل کر شاعر کے جذبات و احساسات کی خوبصورت تصویریں تخلیق کرتے ہیں۔چند مثالیں دیکھیے        ؎      

تم آرہی ہو زمانے کی آنکھ سے بچ کر

نظر جھکائے ہوئے اور بدن چرائے ہوئے

خود اپنے قدموں کی آہٹ سے جھینپتی ڈرتی

خود اپنے سائے کی جنبش سے خوف کھائے ہوئے

تصورات کی پرچھائیاں اُبھرتی ہیں

——

وہ رہ گزر جو مرے دل کی طرح سونی ہے

نہ جانے تم کو کہاں لے کے جانے والی ہے

تمہیں خریدرہے ہیں ضمیر کے قاتل

افق پہ خونِ تمنائے دل کی لالی ہے

تصورات کی پرچھائیاں اُبھرتی ہیں

——

ذہن میں حُسن کی ٹھنڈک کا اثر جاگتا ہے

آنچ دیتی ہوئی برسات کی یاد آتی ہے

——

سورج کے لہوُ میںلتھڑی ہوئی وہ شام ہے اب تک یاد مجھے

چاہت کے سنہرے خوابوں کا انجام ہے اب تک یاد مجھے

ساحر کے کلام میںمخلوط پیکر کی مثالیں بھی ملتی ہیں۔ زمانے کی المناکی،درد و کرب،محرومی اور  اذیت کوشی کا گہرا رنگ ان کے مخلوط پیکروں میں علامتی برتائو کے ساتھ نمایاں ہوا ہے۔ ساحر  کا حسیاتی ادراک مادی دنیا کے آب و رنگ سے نمو پاتا ہے۔وہ اپنے تاثرات اور احساسات کو اپنے عہد سے اخذ کر کے مناسب  لفظوں میں ڈھال کر پیکر تراشی کا حق ادا کرتے ہیں۔ ان  کے یہاں بصری پیکر کی بہتات ہے لیکن یہ بصری پیکر سمعی،لمسی اور سمعی پیکروں میں ڈھل گئے ہیں۔ یعنی ایک سے زیادہ حواس کو ساحر نے ان مخلوط پیکروں میں ڈھال کر بڑی خوبصورتی سے عکاسی کی ہے۔ ایک مثال دیکھیے جس میں بصری، لمسی، سماعی و حرکی اور مذوقی ایک دوسرے سے مل کر مخلوط پیکربن گئے ہیں            ؎  

قمقموں کی زہر اگلتی روشنی

سنگدل پر ہول دیواروں کے سائے

آہنی بت، دیو پیکر اجنبی!

چیختی چنگھاڑتی خونین سرائے

ایک اور مثال دیکھیے جس میں بصری ادراکی، مذوقی اور حرکی پیکر مخلوط پیکر میں ڈھل گئے ہیں۔جیسے         ؎

تیرے ہونٹوں پہ تبسم کی وہ ہلکی سی لکیر

میرے تخیل میں رہ رہ کے جھلک اٹھتی ہے

یوں اچانک ترے عارض کا خیال آتا ہے

جیسے ظلمت میں کوئی شمع بھڑک اٹھتی ہے

ان مثالوں کے مطالعہ سے اندازہ ہوتا ہے کہ ساحر نے اپنے کلام میں اپنے تجربات،مشاہدات،ذہنی تصورات اور نفسیاتی کیفیات کے ذریعے مختلف حواس کو یکجا کرکے پیکروں کی ایک خوبصورت دنیا آباد کی ہے۔انھوں نے مختلف موضوعات کو ان حسی پیکروں کے قالب میں اس طرح ڈھالا ہے کہ ان کے مخصوص لہجے کی انفرادیت واضح ہوکر سامنے آتی ہے۔ان کی شاعری داخلی اور خارجی تجربات، مشاہدات اور جذبات و احساسات کی آئینہ دار ہے۔ انھوں نے اپنی ذاتی زندگی اور اپنے اطراف و اکناف کی زندگی کے غم، افسردگی، حزن وملال، سیاسی ناہمواری، معاشی بدحالی،سماجی پستی اورتہذیبی قدروں کی شکست و ریخت کوشعرکے قالب میں ڈھالنے کے لیے خوبصورت پیکروں کا سہارا لیا ہے جس میں ان کے جذبے کا خلوص، احساسِ لطافت اور تجربات کی صداقت بھی بدرجہ اتم موجود ہے۔ غرض ساحر نے اپنے داخلی اور خارجی حالات کی صداقت کو اپنے مخصو ص اور موثر لہجے میں  بڑی سچائی، سادگی، بے ساختگی اور فنی چابکدستی سے مصوری و نقاشی کر کے پیکر تراشی کا حق ادا کیا ہے اور یہی ان کے فن کا کمال ہے۔

Dr. Arshia Jabeen

Associate Professor, Dept of Urdu

School of Humanities

University of Hyderabad

Hyderabad- 500046 (Telangana)

Mob.: 9989860874

 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں